You are here:  / Uncategorized / نارتھ ناظم آباد میں واٹر بورڈ کی جانب سے مصنوعی پانی کی قلت اور بد انتظامی کا مظاہرہ

نارتھ ناظم آباد میں واٹر بورڈ کی جانب سے مصنوعی پانی کی قلت اور بد انتظامی کا مظاہرہ

صارفین کے تحفظ کی تنظیم سی آر پی سی پاکستان کے چئیرمین مرزا شکیل بیگ کے جانب سے نارتھ ناظم آباد میں عرصہ دراز سے چلتے مصنوعی پانی کے بحران کو برقرار رکھنے پر شدید تشویش کا اظہار کیا ہے بد انتظامی کی وجہ سے نادہندگان اور غیر قانونی علاقوں تک پانی کی فراہمی کی جارہی ہے اور بل ادا کرنے والے صارفین پانی سے محروم ہیں حد تو یہ آدھی گلی میں پانی آتا ہے اور باقی گلی پانی سے محروم رہتی ہے۔

 ایکس سی این نارتھ ناظم آباد سہیل طیب ڈی سی سینٹرل کی جانب سے بار بار ہدایات کے بعدبھی مسئلے کے حل کے لیے سنجیدہ نظر نہیں آرہےہیں اور حکام بالا کو اسکا ذمہ دار قرار دیتے ہیں جبکہ علاقے میں شہریوں سے پیسے لیکر اضافی پانی مہیا کرنےکی خبریں گردش کررہی ہیں۔ ان حالات میں نئی لائینوں میں پانی کا آنا بھی سوالیہ ہے جبکہ بیشتر علاقے میں بیڑ کی پرانی لائینوں کو پلاسٹک سے  تبدیل کردیا گیا ہے دوسری طرف سخی حسن واٹر ہائیڈرنٹ سے ٹینکر مافیا کے ٹینکرز باقائدگی سے بھرے جاتے ہیں اور پمپنگ اسٹیشن کے بلکل مقابل بلاک این میں پانی سہی طریقے سے پمپ نہیں کیا جاتا ہے اور پانی شروع کے گھروں تک محدود رہتا ہے مہنگائی سے پسی عوام ہزاروں کے ٹینکرز خریدنے پر مجبور ہیں ۔ شہریوں نے ایک بار پھر عدالتی واٹر کمیشن کے قیام کا مطالبہ کیا ہے جس نے ماضی میں جسٹس امیر ہانی کی سربراہی میں شہر کے پانی کے مسائل کو حل کرنے میں قلیدی کردار ادا کیا تھا۔  

نارتھ ناظم آباد شہر کا سرِفہرست علاقہ تسلیم کیا جاتا ہے لیکن مسلسل نظر انداز کیے جانے کی وجہ سے بے حد سنگین مسائل سے درپیش ہے جس میں اب و نکاسی سرفہرست رہا ہے  یہ علاقہ سندھ حکومت کی خصوصی توجہ کا منتظر ہے صوبائی وزیر بلدیات ناصر حسین شاہ بہت متحرک وزیر مانے جاتےہیں عوام ان سے توقع رکھتی ہے کہ وہ موجودہ صورتحال کا فوری نوٹس لیکر نارتھ ناظم آباد میں جاری اس پانی کے بحران کو حل کرینگے اور  ذمہ داروں کے خلاف قرار واقعی کاروائی کرینگے۔  

LEAVE A REPLY

Your email address will not be published. Required fields are marked ( required )

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.